انٹرٹینمنٹ پاکستان تازہ ترین

اسلام آباد ہائیکورٹ کا بڑا فیصلہ اثاثے چھپانے پر منی لانڈرنگ کا مقدمہ بنانا غیرقانونی قرار

اسلام آباد(آئی این پی)اسلام آباد ہائیکورٹ نے اثاثے چھپانے یا ڈیکلیئر نہ کرنے پر منی لانڈرنگ کا مقدمہ بنانا غیرقانونی قرار دے دیا۔ نجی ٹی وی کے مطابق  اسلام آباد ہائیکورٹ میں کاروباری شخصیت الطاف احمد گوندل کے خلاف منی لانڈرنگ ایکٹ کے تحت درج ایف آئی آر

پر کیس کی سماعت ہوئی، جس میں الطاف احمد گوندل کے کیس کی پیروی عدنان رندھاوا ایڈووکیٹ نے کی۔عدالت نے منی لانڈرنگ ایکٹ کے تحت درج ایف آئی آر غیرقانونی قرار دے کر خارج کردی۔اسلام آباد ہائیکورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے 5صفحات پر فیصلہ جاری کردیا۔

جس میں کہا گیا کہ ایف بی آر اثاثے ڈکلیئر نہ کرنے یا چھپانے پر قائم مقدمہ میں منی لانڈرنگ ثابت نہیں کر سکا۔چیف جسٹس اطہر من اللہ کی جانب سے جاری کیے گئے فیصلے میں کہا گیا ہے کہ 29جون 2021کو درج ایف آئی آر میں اثاثے ڈیکلیئر نہ کرنے یا چھپانے کا الزام ہے، پٹیشنر کے خلاف منی لانڈرنگ کا کریمنل کیس بنانے کی کارروائی اختیارات سے تجاوز اور غیرقانونی ہے، یہ

صرف اثاثے چھپانے کا کیس تھا منی لانڈرنگ کا جرم نہیں بنتا۔فیصلے میں کہا گیا ہے کہ اثاثے جرم کی رقم سے نہ بنائے گئے ہوں تو منی لانڈرنگ ایکٹ کا اطلاق نہیں ہوگا، منی لانڈرنگ کا مقدمہ بنانے کے لیے جرم کے پیسے سے اثاثے بنانے کا ربط ثابت کرنا ضروری ہے،اسلام آباد ہائیکورٹ نے کہا کہ 2010کا ایکٹ منی لانڈرنگ اور دہشتگردی کی فنڈنگ روکنے کے لیے جاری کیا گیا، 2010کے ایکٹ کی سیکشن 4کے تحت منی لانڈرنگ قابل سزا جرم ہے۔

چیف جسٹس اطہر من اللہ نے اپنے فیصلے میں کہا ک ادارہ اثاثے چھپانے کے تحت کارروائی کرنا چاہے تو متعلقہ قانون کے تحت کرسکتا ہے۔

اپنا کمنٹ کریں