آرٹیکلز پاکستان تازہ ترین

مجھے نہیں پتہ تھا کہ پرفارم کرنا اتنا بڑا گناہ ہوتا ہے

اسلام آباد (مانیٹرنگ، این این آئی)وفاقی وزیر مواصلات مراد سعید نے کہا ہے کہ میڈیا میں ان کی کارکردگی پر تبصرہ کرنے کے بجائے ان کے بارے میں غلیظ گفتگو کی جاتی ہے،مجھے پہلی دفعہ پتہ چلا کارکردگی دکھانا کتنا بڑا گناہ ہے،پارلیمنٹ میں آیا تو ڈگری کا مسئلہ بنایا گیاجس پر تین سال کیس لڑا اور جیتا، میں نے ڈیلیور کیا اور آپ دیکھیں گے ایک نئے انداز سے پارلیمنٹ میں اور جلسوں میں مقابلہ کروں گا۔

پارلیمنٹ تک عام آدمی پہنچتا نہیں، پہنچے تو غلیظ تعلق کا بولتے ہیں، میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جب سے وزارتوں کی کارکردگی کا جائزہ لیا گیا اور اس کے بعد مجھے پہلی دفعہ پتہ چلا کہ کارکردگی دکھانا کتنا بڑا گناہ ہے۔انہوں نے کہا کہ ایسا نہیں ہے کہ 2013 کی ایک صبح میں اٹھا اور پھر پارلیمنٹ میں پہنچا تاہم قوم کو بتانا چاہتا ہوں کہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی اسٹوڈنٹ ونگ کا میں بانی ہوں اور اس کی بنیاد میں نے رکھی۔انہوں نے کہاکہ نہ صرف بنیاد رکھی بلکہ کم عرصے میں خیبرپختونخوا کی سب سے مضبوط طلبہ قوت بنا کر ثابت کیا اور اسی دوران چاہے قبائلی اضلاع میں دہشت گردی کی جنگ کے دوران اپنے لوگوں کی مدد کرنا ہو، چاہے آپریشن کے خلاف اپنے لوگوں کے ساتھ کھڑا ہونا، چاہے عدلیہ بحالی کی تحریک ہو یا چاہے پاکستانیوں کو پاکستان کی سڑکوں میں گولی مارنے والے ریمنڈ ڈیوس کے خلاف نکلنا ہو۔

انہوں نے کہا کہ چاہے ڈرون حملوں کے خلاف یا ملک میں ظلم اور ناانصافی کے خلاف جدوجہد کرنی ہو، ان تحریکوں میں نہ صرف مسلسل حصہ لیا بلکہ جیلوں میں گیا، ڈنڈے کھائے، دھمکیاں ملیں اور ان سب چیزوں کو برداشت کیا۔مراد سعید نے کہا کہ جب آئی ایس ایف کو ملک بھر میں منظم کیا اور آج میرے بعد بھی پارلیمان میں ہمارے مختلف نوجوان آرہے ہیں، اس کے بعد ملک میں تحریک انصاف کی یوتھ ونگ کو منظم کیا۔ انہوں نے کہاکہ 2013 میں پارٹی نے میرے اوپر اعتماد کیا تو میں خیبرپختونخوا کی سب سے بڑی لیڈ کے ساتھ پارلیمنٹ میں پہنچا، میں پارلیمنٹ میں ان کی جی حضوری کرنے نہیں آیا تھا۔انہوں نے کہا کہ میں اپنے جیسے ہر اس شخص کی آواز بننے آیا تھا جن کے گردن پر انہوں نے اپنی طاقت کا گھٹنا رکھا ہوا ہے، جو یہ سمجھتے ہیں کہ

کہ مراد بھی تو گالی دیتا ہے، آج تک کسی نے نہیں پوچھا کہ کیا گالی دیتا ہے، جب سوال ہوا تو کہتے ہیں کہ مراد سعید کہتا ہے فرزند زرداری، ان کو صرف یہ جواب ملا۔انہوں نے کہا کہ اس معاملے پر پہلے اس نہیں بولا کہ مجھے اور میرے خاندان کو غلیظ گالیاں دی جارہی تھیں، تب تک میری ذات کو نشانہ بنا رہے تھے تاہم آج اس لیے

بول رہا ہوں کہ جب یہ کارکردگی کا جائزہ لیا گیا تو میں وزارت چہرہ ہوں۔ انہوں نے کہاکہ یہ کامیابی میرے ہر موٹروے پولیس اہلکار کی تھی جو آپ کا سفر محفوظ بنانے کے لیے شہید ہوا، یہ سند میرے پاکستان پوسٹ کے سیکریٹری سے لے کر ڈی جی، کلاس فور ملازم اور پوسٹ مین کے لیے تھی جو مائنس 13 ڈگری میں گلگت کیبرف پوش وادیوں میں آپ کی امانت پہنچارہا تھا۔انہوں نے کہا کہ یہ سند میرے ہر اس این ایچ اے کے افسر اور اہلکار کی تھی، جن کی محنت کی وجہ سے 3 سال کے قلیل عرصے میں این ایچ اے کو آئی ایس او سرٹیفکیشن ملی۔انہوں نے کہاکہ میرے ساتھ بغض اور نفرت کرسکتے ہیں لیکن پاکستان پوسٹ کے 46 ہزار ملازمین، این ایچ اے

اور موٹروے کے ہزاروں اہلکارں کے ساتھ یہ ظلم نہیں کرسکتے ہیں۔وفاقی وزیر کا کہنا تھا کہ میں لوور مڈل کلاس اور مڈل کلاس سے مخاطب ہوں، جو باتیں میں نے کی اور جو غلیظ مہم یہ چلا رہے ہیں، ان سیاست دانوں کی نظروں میں آپ کی اوقات ہے۔ان کا کہنا تھا کہ میرے ساتھ دیگر جماعتوں کے طلبہ تنظیموں کے رہنما تھے وہ آجبھی ہوسٹل میں پڑے ہیں، پہلے ان کے لیے اور آج ان کی اولاد کے لیے زندہ باد اور مردہ باد کے نعرے لگا رہے ہیں لیکن ان کو اعتماد اور موقع نہیں دیں گے۔مراد سعید نے کہا کہ ان کی مہموں کے باوجود کھڑا ہوں، میں نے ڈیلیور کیا اور آپ دیکھیں گے کہ ایک نئے انداز سے پارلیمنٹ میں اور جلسوں میں مقابلہ کروں گا۔

اپنا کمنٹ کریں